چلاس: شاہراہ قراقرم پر کانوائے سسٹم ختم کرکے مستقل طور پر مسافروں کو سکیورٹی کا انتظام کیا جائے،مسافروں کا مطالبہ|PASSUTIMESاُردُو

11127764_853394441373700_3679798191847059684_n

file photo

چلاس: اتوار، 13 دسمبر، 2015ء – پھسو ٹائمز اُردُو (ایس یو ثاقب) شاہراہ قراقرم  گلگت تا راولپنڈی کانوائے کے نام پر مسافروں کی تزلیل جاری بولنے پر فرنٹیئرکانسٹبل بتمیزی کرنےپر اُتر آتے ہیں، کانوائے کہہ کر جگہ جگہ گھنٹوں روکا جاتا ہے اور ایک پولیس اہلکار کے رحم و کرم پہ مسافروں کو روانہ کیا جاتا ہے اس کانوائے سے مسافروں کو زہنی ازیت سے دو چار ہونا پڑرہا ہے اور کوئی سکیورٹی کا خاص انتظام نہیں ہے، 30 بسوں کے ساتھ ایک پولیس اہلکار کا کانوائے میں ساتھ ہونا ایک مزاق ہے اور مسافروں کا وقت زیاں ہے، اپنے مطلوبہ وقت پر مسافر نہیں پہنچ پاتے ہیں خیبر پختون خواہ حکومت بھی کانوائی کے نام پر مزاق کر رہے ہیں مسافروں کے کہنے پر ان کے ساتھ بتمیزی کیا جاتا ہے۔ حکومت گلگت بلتستان کے احاطے میں بھی یہی صورت حال ہے مسافروں نے کہا ہے کہ اس طریقہ کار کو ختم کر کے مستقل طور پہ مسافروں کو سیکورٹی کا انتظام کیا جائے اور کانوائی ختم کر کے ہر بس کے ساتھ پولیس اہکار تعینات کیا جائے۔

Advertisements

One response to “چلاس: شاہراہ قراقرم پر کانوائے سسٹم ختم کرکے مستقل طور پر مسافروں کو سکیورٹی کا انتظام کیا جائے،مسافروں کا مطالبہ|PASSUTIMESاُردُو

  1. Really alarming and challenging for GB and KPK Government. Prior to this i had also elaborated about this serious issue. Daily 5 thousand GBIANS pass through this route and their daily 5 hours waste in stoppage and on barriers. Thus we loss 25 000 hours that becomes two years of a person and thus we also loss 60 years in a month and 720 years in a year. If we calculate the average that becomes the whole lives of 9 people at the age of 80. In short due to this barriers and convoy 9 people life spent in this convoy. CM GB and KPK is requested to take it serious and save the lives of Nine people annually where they spent on the way stoppage. It is hoped Imran Khan and PM and both CMs would be on same page to resolve this burning issue of GB.

    Ali Mehr
    Social Activist/ Social Auditor
    Danyore GB

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s