گلگت: سٹی ہسپتال کشروٹ عملے کی غفلت اور نااہلی کے باعث8ماہ کا نومولود بچہ حماد عالم لون جان کی بازی ہار گیا ورثاء کا سٹی ہسپتال کے عملے کے خلاف سخت احتجاج، واقعہ کا تحقیقات کا مطالبہ|PASSUTIMESاُردُو

گلگت: جمعرات، 24 دسمبر، 2015ء – پھسو ٹائمز اُردُو(نمائندہ خصوصی) سٹی ہسپتال کشروٹ عملے کی غفلت اور نااہلی کے باعث8ماہ کا نومولود بچہ حماد عالم لون جان کی بازی ہار گیا ورثاء کا سٹی ہسپتال کے عملے کے خلاف سخت احتجاج ،غفلت سے پیش آنے والے واقعہ کا تحقیقات کرنے کا مطالبہ پیر اور منگل کے درمیانی شب جب 8ماہ کے حمادعالم لون ساکن کونوداس گلگت جوکہ سٹی ہسپتال کشروٹ میں زیر علاج تھے کو جب بیماری میں شدت آئی تو اس کے والدین ہسپتال میں ڈاکٹر اور کمپوڈر کو ڈھونڈنے کیلئے نکلے اور ٹھوکریں کھاتے ہوئے واپس آئیں ایمرجنسی ڈاکٹر کی عدم موجودگی اور نچلے سٹاف کے زریعے علاج کرکے غفلت کی وجہ سے طبیعت مزید بگڑ گئی اور بچہ تکلیف سے تڑپتا رہا اس دوران حما د عالم لون کے والدین نے ڈاکٹر سے احتجاج کیا تو انہوں نے سی ایم ایچ لے جانے کو کہا جہاں سے انہیں دوباری ڈی ایچ کیوہسپتال گلگت منتقل کردیا گیا ڈی ایچ کیوہسپتال میں ایمرجنسی ڈاکٹر نے بتایا کہ بچے کی طبیعت بہت بگڑ گئی ہے اور ہسپتال لانے تک آپ لوگوں نے بہت دیر کردی ہے اگر وقت پر لایا جاتا تو علاج ممکن تھا تاہم ایمرجنسی ڈاکٹر نے فوری طور پر چائلڈسپیشلسٹ ڈاکٹر منظور کو بلوالیا اور بچے کو ایڈمٹ کیا اور رات بھر بچے کا علاج ہوتا رہا تاہم کوئی کوشش سودمند ثابت نہیں ہوسکی اور سٹی ہسپتال کشروٹ کے عملے کی غفلت بچے کی جان لے گئی ا س حوالے سے لواحقین نے میڈیا کو بتایا کہ سٹی ہسپتال کشروٹ عملے کی مجرمانہ غفلت اور ڈاکٹر کی عدم موجودگی کے باعث حماد عالم لون جان کی بازی ہار گئے ہیں سٹی ہسپتال کشروٹ میں مریضوں کی سہولت کیلئے کوئی چیز موجود نہیں ہے جس وارڈمیں مریضوں کو رکھا جاتا ہے اس کی وجہ سے مرض بڑھتا جاتا ہے ڈاکٹروں اور ان کے عملے کا رویہ انتہائی غیر مناسب ہے ایمرجنسی مریضوں کو چھوڑ کر ہوٹلوں میں چائے پینے چلے جاتے ہیں انہوں نے کہا کہ حماد عالم کی معمولی طبیعت بگڑنے کی وجہ سے سٹی ہسپتال لایا گیا تھا جہاں پر مناسب علاج نہ ہونے اور ڈاکٹروں کی عدم موجودگی کی وجہ سے بچہ کی طبیعت مزید بگڑ گئی اور بعد کی کوششیں بار آور ثابت نہ ہوسکیں انہوں نے وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن ،پارلیمانی سیکریٹری صحت حاجی حیدر خان اور محکمہ صحت کے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ 8ماہ کے معصوم بچے کی ڈاکٹر اور عملے کی غفلت کے باعث موت واقع ہونے کا نوٹس لیکر زمہ داروں کے خلاف کاروائی کریں ۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s