گلگت: سرکاری آفسران کی طر ف سے عدم دلچسپی اور تاخیری حربوں کے خلاف اشکومن ایکشن کمیٹی نے 12جنوری کو چٹورکھنڈ میں احتجاج جلسے کی رابطہ مہم مکمل|PASSUTIMESاُردُو

12509717_746682715433825_1748758705445779580_nگلگت: اتوار، 10 جنوری، 2016ء –  پھسو ٹائمز اُردُو (نعیم انور) حکومتی و انتظامی سطح پر تحصیل اشکومن کو زندگی کے ہر شعبے میں نظر انداز کرنے اور عوامی مسائل کے حل میں سرکاری آفسران کی طر ف سے عدم دلچسپی اور تاخیری حربوں کے خلاف اشکومن ایکشن کمیٹی نے 12جنوری کو چٹورکھنڈ میں احتجاج جلسے کو کامیاب بنانے کیلئے عوامی رابطہ مہم مکمل کر دیا ،منگل کے روز اشکومن کے ہزاروں لوگ انتظامیہ کے نامناسب رویے کیخلاف سخت احتجاج کرینگے ،ایکشن کمیٹی نے احتجاجی جلسے کو کامیاب بنانے کیلئے گاوں گا وں رابطہ مہم چلا کر علاقے کے تمام نمبرداران و عمائدین کو اعتماد میں لیں لیا ، زرائع کے مطابق عوام نے احتجاجی جلسے میں بھرپور شرکت کی یقین دہانی کرا دی ہے ،اشکومن ایکشن کمیٹی کے ممبران علی گوہر،قربان خان،جاگیر خان،شادم خیل و دیگر نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت اور ضلعی انتظامیہ نے تحصیل اشکومن کے لوگوں کی شرافت کو کمزوری سمجھا ہے ،عوامی ایشوز کے حل کیلئے جب بھی سرکاری دفتروں میں جاتے ہیں تو سرکار کے نوکر عوامی معمالات کے حل کا گوارہ نہیں کرتے ،علاقے میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ ہے،گندم کا بحران ،ہسپتالوں اور سکولوں کی حالت زار ابتر ہے ،ترقیاتی منصوبے تعطل کا شکار ہیں ۔بے روزگاری سے نوجوان تنگ آکر معاشرتی برائیوں کی طرف راغب ہو رہے ہیں مگر منتخب نمائندوں سمیت تمام سرکاری ادارواں کے ضلعی سربراہان ٹس سے مس نہیں عوام کا مذاق اُڈایا جا رہا ہے ،سرکاری دفتروں میں سائلین کو ٹال دیا جاتا ہے ، سرکا ر کے نوکروں کے اگے عوام کی تزلیل مذید برداشت نہیں کی جائے گی۔انہوں نے کہا مختلف قراردادوں کے زریعے ڈپٹی کمشنر غذر و دیگر زمہ داروں کو مختلف وعوامی مسائل کے حل کیلئے آگاہ کیا گیا مگر مقررہ وقت تک کسی نے مسائل کے حل کی طرف توجہ نہیں دیا اب تنگ آمد باجنگ آمد اپنے جائز حقوق کے حصول کیلئے جمہوری انداز سے عوامی طاقت کا مظاہرہ کیا جا رہا ہے ۔احتجاج جلسے کے بعد عوامی مسائل حل ہوئے تو ٹھیک نہ ہونے کی صورت میں لانگ مارچ سمیت دیگر کئی آپشنز پر غور کیا جارہا ہے۔یاد رہے کہ اشکومن ایکشن کمیٹی آل پارٹیز پر مشتمل ہے جس میں پی ایم این ،پی پی پی،بی این ایف،آل پاکستان مسلم لیگ ،عام آدمی پارٹی تحریک انصاف و دیگر پارٹیوں کے مقامی قائدین شریک ہیں ۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s