گلگت: ضلع ہنزہ کے لئے نیا جنریٹرخریدا جائے تاکہ ہنزہ کے عوام کو بجلی کے حوالے سے درپیش مسائل دور کیے جاسکے۔ وزیراعلیٰ|PASSUTIMESاُردُو

06-02-16 (1).jpgگلگت: پیر، 08 فروری، 2016ء – پھسو ٹائمز اُردُو (پ ر) وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ امن وامان ہماری حکومت کی اولین ترجیح ہے اسی لئے محکمہ پولیس کو درکار ضروری آلات اوروسائل کی خریداری کی منظوری دی گئی ہے۔ ماضی میں محکمہ پولیس کی ضروریات کو پوری کرنے پر توجہ نہیں دیا گیا اور اس اہم محکمہ کو ضروری وسائل فراہم نہیں کیے گیے جس کی وجہ سے پورے صوبے میں صرف ایک بکتر بند گاڑی موجود ہے ہم نے پولیس فورس کو جدید آلات کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے322.260ملین روپے کی منظوری دی ہے جس سے پولیس فورس کو درکار ضروری وسائل خریدے جائینگے جن میں 3 جدید بکتر بند گاڑیاں،10 فوک لیفٹرز،سرویلنس ، جدیداسلحہ ، کیمرے نصب شدہ گاڑیاں اور دیگر ضروری سامان شامل ہیں۔ وزیراعلیٰ نے سیکریٹری داخلہ اور دیگر متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ مئی کے آخیر تک شہر میں نائٹ ویژن کیمروں کی تنصیب یقینی بنائی جائے۔ وزیراعلیٰ نے کہا ہے کہ حکومت عوام کی فلاح وبہبود کیلئے تمام وسائل بروئے کار لارہی ہے۔ محکمہ ریسکیو1122کی گلگت اور سکردو کے بعد دیامر اور گانچھے میں وسعت دینے کی منظوری گئی ہے جس پر293.147 ملین روپے کی خطیر رقم لاگت آئیگی جس سے متعلقہ اضلاع کے عوام کوکسی بھی ہنگامی صورتحال میں ریسکیو کے وسائل میسر آئینگے۔ ان دفاتر کیلئے جدید 4×4ایمبولینسز، آگ بجھانے والی گاڑی اور بنیادی طبعی امداد کیلئے درکار وسائل خریدے جائینگے۔ ریسکیو1122کے 30 جوانوں کی پاک بحریہ کے زیر اہتمام غوطہ خوری کی تربیت کراچی میں کرائی جائیگیجس کا فیصلہ وزیراعلیٰ گلگت بلتستان اور پاک بحریہ کے سربراہ کے مابین ہونے والی ملاقات میں کیا گیا ہے۔ان خیالات کا اظہار وزیرا علیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے گلگت بلتستان ڈیولپمنٹ ورکنگ پارٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر سول اور سیشن عدالتوں میں سائیلین کو درپیش مشکلات دور کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے صوبائی سیکریٹری داخلہ اور کمشنر گلگت ڈویژن کو ہدایت کی ہے کہ گلگت کے سول اور سیشن عدالتوں کا دورہ کرکے سائیلین کیلئے انتظار گاہوں کے قیام اور پینے کے صاف پانی سمیت دیگرضروری سہولیات کو یقینی بنائیں۔ موجودہ سول اور سیشن عدالتوں کی تزعین و آرائش کیلئے354.065ملین روپے کی منظوری دی۔ وزیراعلیٰ نے نئے سب ڈویژنز میں سول اورچیف ججز کیلئے عدالتوں اور رہائشگاہوں کی تعمیر کیلئے288.700 ملین ر وپے کی منظوری دی گئی ہے جس سے عوام کو سستی انصاف کی فراہمی یقینی بنانے میں مدد ملے گی۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ تعمیرات کو ہدایت کی ہے کہ سرکاری دفاتر کی تعمیر جدید طرز کے مطابق کیا جائے جدید طرز تعمیر سے عمارت کی دلکشی سرکاری وسائل اور وقت کو بچایا جاسکے گا۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ تعمیرات اور دیگر متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ صوبے کا انفرا سٹریکچر کو جدید خطوط پر تعمیر کرنے کیلئے اقدامات کیے جائیں۔ سیکریٹری تعمیرات کو ہدایت کی ہے کہ آئندہ اجلاسوں میں3D کے ذریعے بریفنگز کا انعقاد یقینی بنائیں اور دیار اورپتھر کا تعمیرات میں استعمال ختم کیا جائے جس سے وقت اور وسائل بچ سکے وزیراعلیٰ نے اس موقع پر جوٹیال کے مقام پر تعمیر کی جانے والی جدیدNHA بلڈنگ کا حوالہ دیا۔ وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے سکردو کچورہ2میگا واٹ ہائیڈرل پاور پراجیکٹ کی تعمیر کیلئے230.109 ملین روپے کی منظوری دی اور صوبے میں موجود 18جنریٹروں کی تبدیلی کیلئے 215.555ملین روپے کی منظوری دی۔ وزیراعلیٰ نے کسی بھی ہنگامی صورتحال میں بجلی کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے نئے ڈیزل جنریٹروں کی خریداری کیلئے259.482ملین روپے کی منظوری دی۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے کہا کہ زیر تعمیر پاور پراجیکٹس کی تکمیل اور نئے پاور پراجیکٹس کی تعمیر سے صوبے میں جاری لوڈ شیڈنگ پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔ وزیراعلیٰ نے سیکریٹری برقیات کو ہدایت کی ہے کہ استور رحمان پور کے عوام کو بجلی کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے جنریٹر کی تنصیب عمل میں لائی جائے اور ضلع ہنزہ کے لئے نیا جنریٹرخریدا جائے تاکہ ہنزہ کے عوام کو بجلی کے حوالے سے درپیش مسائل دور کیے جاسکے۔ وزیراعلیٰ نے صوبائی سیکریٹری برقیات کو ہدایت کی ہے کہ گلگت شہر میں بجلی کا نظام بہتر بنانے کیلئے کمیونٹی آر گنائزیشنز کا قیام عمل میں لایا جائے اور بجلی کے بے دریغ استعمال کی روک تھام اور بجلی کے بلات کی حصول کو بہتر بنانے کیلئے علماء کرام سے بھی رابطہ کیا جائے تاکہ علماء کرام اپنے خطبات میں بجلی کے بلوں کی عد م ادائیگی اور بجلی کاغیر ضروری استعمال کی حوصلہ شکنی کریں۔ وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ محکمہ برقیات اس قسم کی پالیسی بنائیں جس کے تحت بجلی کے بل ادا کرنے والے علاقے کے عوام کومسلسل بجلی فراہم کی جائے اور جن علاقوں کے عوام بجلی کے بل ادا نہیں کرتے ان علاقوں کے عوام کو احساس دلایا جائے کہ بجلی کے بلات کی ادائیگی نظام کی بہتری کیلئے لازمی ہے۔ اس حوالے سے جن علاقوں سے70فیصد بل ادا کیے جاتے ہیں وہاں کے عوام کیلئے نئےٹرانسفارمرز اور بہتر بجلی کی ترسیل کا عمل یقین بنایا جائے اور جن علاقوں سے70فیصد سے کم بجلی کے بل ادا کیے جاتے ہیں ان مقامات پر ٹرانسفارمرز کی مرمت کمیونٹی کی ذمہ کی جائے۔
وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ حکومت علاقے سے بے روزگاری کے خاتمے کیلئے پرائیوٹ سیکٹر کو فروغ دے رہی ہے عوام کو روزگار کے مواقعے فراہم کرنے کیلئے وزیراعلیٰ خود روزگار سکیم کے تحت بلاسود قرضوں کا اجراء کیا گیا ہے ابتدائی طورپر خود روزگار سکیم کیلئے250ملین روپے مختص کیے گیے تھے جس سے250افراد مستفید ہوئے ہیں اور اپنا کاروبار شروع کیا ہے۔ عوام کی دلچسپی اور علاقے سے بے روزگاری کے خاتمے کیلئے وزیر اعلیٰ خود روزگار سکیم کیلئے مزید399.000 ملین روپے کی منظوری دی گئی ہے تاکہ عوام کو خود انحصاری کی راہ پر گامز ن کیا جاسکے۔ وزیراعلیٰ خو دروز سکیم کی حد20ہزار سے بڑھا کر75ہزار کی گئی ہے آئندہ سال اس حد کو بڑھا کر1لاکھ تک کی جاسکے گی۔ وزیراعلیٰ خود روز گار سکیم بلاسود قرضوں کے تحت گھریلوں سطح پر صنعتوں کے قیام اور چھوٹے پیمانے پر کاروبار کا آغاز کیا جاسکے گا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ اس سکیم کی تشہیر کو یقینی بنایا جائے تاکہ عوام کو اس سکیم کے حوالے سے زیادہ سے زیادہ معلومات حاصل ہو سکے۔
وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے جوٹیال کے عوا م کو پانی کے حصول کے حوالے سے درپیش مسائل کو دور کرنے کیلئے صاف پانی کی فراہمی کیلئے246.977ملین روپے کے سکیم کی منظوری دی ہے۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ نے کہا کہ اس منصوبے کی تعمیر سے جوٹیال کے عوام کو درپیش پانی کے مسئلے کو مستقل بنیادوں پرحل کیا جاسکے گا۔ وزیراعلیٰ نے رول آر گنائزیشن نمبر3ذوالفقار آباد کے عوام کیلئے جاری پانی کے منصوبے کی تکمیل کیلئے بھی رقم کی منظوری دی ہے۔ان سکیموں کی تکمیل سے اپر جوٹیال اورذوالفقار آباد سمیت وہاں کے دیگر علاقوں کے عوام کو پانی کی فراہمی مستقل بنیادوں پر یقینی بنائی جاسکے گی۔ وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ کنوداس کے عوام کیلے بھی پانی کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے منصوبے کو جلد حتمی شکل دے کے متعلقہ فورم سے منظوری لی جائے اور یہ منصوبہ محکمہ تعمیرات کے زیر انتظام مکمل کیا جائیگا۔

وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے سکردو چھومک276 میٹر آر سی سی پل کی تعمیر کیلئے399.000 ملین روپے کی منظوری دیتے ہوئے کہا کہ جون سے قبل اس اہم منصوبے پر کام کا آغاز یقینی بنایا جائے اس اہم منصوبے کی تعمیر سے سکردو اور شگر کے مابین فاصلے کم ہوگا۔ بلتستان یونیورسٹی کی تعمیر کیلئے وزیر اعظم پاکستان کی خصوصی ہدایات ہیں بلتستان یونیورسٹی کی تعمیر اور دیگر سرکاری دفاتر کے قیام کیلئے اس پل کی تعمیر سے وسیع اراضی میسر آئیگی۔ وزیراعلیٰ نے علاقے کی تعمیر و ترقی کو جدید خطوط کے مطابق کرنے کیلئے گلگت ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی اہمیت کو مدد نظر رکھتے ہوئے گلگت ڈیولپمنٹ اتھارٹی(GDA) کی فعالیت کیلئے261.300 ملین روپے کی منظوری دی۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s